You are here: فلسطین فتحاوی رہنما پر مسجد اقصیٰ میں داخلے پر 6 ماہ کے لیے پابندی عائد
 
 

فتحاوی رہنما پر مسجد اقصیٰ میں داخلے پر 6 ماہ کے لیے پابندی عائد

E-mail Print PDF

0Pala8555مقبوضہ بیت المقدس - (فلسطین نیوز۔مرکز اطلاعات) اسرائیلی فوج نے فلسطین کے مقبوضہ بیت المقدس میں تحریک ’فتح‘ کے سیکرٹری اور جماعت کے سرکردہ رہنما شادی مطور پر چھ ماہ کے لیے مسجد اقصیٰ میں داخلے پر پابندی عائد کردی ہے۔

فلسطین نیوز کو موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق شادی  مطور کے بھائی اور سماجی کارکن فادی مطور نے بتایا کہ اسرائیلی انٹیلی جنس حکام کی طرف سے ان کے بھائی کو ایک نوٹس جاری کیا گیا ہے جس میں انہیں کہا گیا تھا کہ وہ ’القشلہ‘ سیکیورٹی سینٹر میں خود کو پیش کریں۔ جب وہ وہاں پیش ہوئے تو انہیں کہا گیا کہ ان پر مسجد اقصیٰ پر چھ ماہ کے لیے داخلے پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔

فادی مطور کا کہنا ہے کہ ان کے بھائی اور فتح کے مقامی رہنما شادی مطور کو ایک نوٹس جاری کیا گیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ وہ 11 ستمبر سے 8 مارچ 2018ء مسجد اقصیٰ میں داخل نہیں ہوسکتے۔

’قدس پریس‘ کی رپورٹ کے مطابق رواں سال صہیونی فوج اور انٹیلی جنس اداروں نے نام نہاد الزامات کے تحت 12 فلسطینیوں پر مسجد اقصیٰ میں نماز کی ادائیگی پر پابندی عائد کی ہے۔