You are here: فلسطین زیرحراست فلسطینی سماجی کارکن کے خلاف مقدمہ کی سماعت ملتوی
 
 

زیرحراست فلسطینی سماجی کارکن کے خلاف مقدمہ کی سماعت ملتوی

E-mail Print PDF

0Pala6068مقبوضہ بیت المقدس (فلسطین نیوز۔مرکز اطلاعات) اسرائیل کی فوج داری نے زیرحراست فلسطینی سماجی کارکن نھاد الزغیرکے مقدمہ کہ سماعت سات مارچ 2018ء تک ملتوی کردی ہے۔

فلسطین نیوز کو موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق نھاد الزغیرکے خلاف مقدمہ کی سماعت کئی ماہ سے جاری ہے۔ ان پر الزام ہے کہ وہ فلسطینی نوجوانوں کو مسجد اقصیٰ کی طرف راغب کرنے، سوشل میڈیا پر اسرائیل کے خلاف اشتعال پھیلانے اور قبلہ اوّل پر دھاوے بولنے والے صیہونی آباد کاروں سے الجھ کرانہیں روکنے کی کوشش کرتے رہے ہیں۔

اسیر کے وکیل خالد زبارقہ نے میڈیا کو بتایا کہ صیہونی عدالت میں پیش کردہ فرد جرم میں الزغیر پر’الاقصیٰ یوتھ‘ نامی گروپ کو منظم کرنے اور فلسطینی نوجوانوں کو قبلہ اوّل سے مربوط کرنے کے لیے مختلف کارروائیوں میں  پیش پیش رہے ہیں۔

خیال رہے کہ فلسطینی سماجی کارکن نھاد الزغیر کو اسرائیلی فوج نے جون 2017ء کو سعودی عرب سے واپسی پر حراست میں لیا تھا۔ الزغیر اس وقت اسرائیلی جیل مجد میں پابند سلاسل ہیں۔