You are here: Home
 
 

اسرائیل کو برطانوی اخبار کا اسلحہ کی فروخت بند کرنے کا مطالبہ

E-mail Print PDF

0Pala10569لندن (فلسطین نیوز۔مرکز اطلاعات) برطانیہ کے ایک اخبار نے اسرائیل کو اسلحہ کی فروخت بند کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ برطانوی اخبار نے اصولی مؤقف اختیار کرتے ہوئے لکھا ہے کہ اسرائیل نہتے فلسطینی مظاہرین پر طاقت کا اندھا دھند استعمال کر رہا ہے۔ اس لیے برطانیہ کا اسرائیل کو اسلحہ فروخت کرنا اسرائیلی فوج کی فلسطینیوں کے خلاف جرائم میں مدد کرنے کے مترادف ہے۔ اس لیے لندن اسرائیلی فوج کو اسلحہ کی فروخت پر پابندی عائد کرے۔

فلسطین نیوز کو موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق برطانوی اخبار ’انڈی پنڈنٹ‘ کی نامہ نگار ریفکا بارڈنارڈ نے اپنے ایک مضمون میں لکھا ہے کہ برطانیہ کی طرف سے اسرائیل کو دفاعی سامان کی فراہمی جاری رہنا برطانوی قانون کے منافی ہے۔ برطانیہ سے خرید کردہ اسلحہ اور ہتھیار اسرائیلی فوج پُرامن اور نہتے مظاہرین کے خلاف استعمال کر رہی ہے۔

برنارڈ کا کہنا ہے کہ اسرائیل کو اسلحہ اور دفاعی سامان کی فروخت جنگی جرائم میں اسرائیلی ریاست کی مادی مدد کرنے کے مترادف ہے اور ایسا کرنا عالمی قوانین اور برطانوی قانون کے خلاف ہے۔

ان کا مزید کہنا ہے کہ برطانیہ یہ دعویٰ کرتا ہے کہ وہ فلسطین۔ اسرائیل تنازع میں غیر جانب دار ہے۔ اگر لندن حکومت غیر جانب دار ہے تو اسرائیلی فوج کو اسلحہ کی فراہمی کیوں جاری رکھے ہوئے ہے، حالانکہ حکومت کو علم ہے کہ اسرائیلی فوج نہتے فلسطینیوں کے خلاف طاقت کا اندھا دھند استعمال کرتے ہوئے جنگی جرائم کی مرتکب ہو رہی ہے۔

مسز برنارڈ کا کہنا ہے کہ برطانوی ارکان پارلیمان کو کھل کر حکومت سے مطالبہ کرنا چاہیے کہ وہ اسرائیل کو اسلحہ اور گولہ بارود فروخت نہ کرے کیونکہ اسرائیل فلسطینیوں کے خلاف اسلحہ کے استعمال میں عالمی قوانین کی خلاف ورزی کررہا ہے۔

خیال رہے کہ حال ہی میں فلسطین میں شروع ہونے والے حق واپسی مظاہروں کے دوران فلسطینیوں کی پُرامن ریلیوں پر طاقت کا اندھا دھند استعمال کیا جس کے نتیجےمیں 32 فلسطینی شہید اور 3100 زخمی ہوچکے ہیں۔ زخمیوں میں سے درجنوں کی حالت تشویشناک ہے۔