You are here: Home
 
 

عالمی برادری عہد تمیمی کی رہائی کے لیے اسرائیل پر دباؤ ڈالے: ایمنسٹی

E-mail Print PDF

0Pala9941لندن (فلسطین نیوز۔مرکز اطلاعات) انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والی عالمی تنظیم ’ایمنسٹی‘ نے عالمی برادری پر زور دیا ہے کہ وہ فوجی کو تھپڑ مارنے کی پاداش میں اسرائیلی جیل میں قید کم سن فلسطینی لڑکی عہد تمیمی کی رہائی کے لیے اسرائیل پر دباؤ ڈالے۔

فلسطین نیوز کو موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق عالمی ادارے نے ایک بیان میں اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاھو پر بھی زور دیا ہے کہ وہ 16 سالہ فلسطینی عہد تمیمی کی جیل سے رہائی کے احکامات صادر کریں۔

خیال رہے کہ سولہ سالہ عہد تمیمی کو اسرائیلی فوج نے گذشتہ برس غرب اردن سے اس وقت حراست میں لیا تھا جب اس نے اپنے گھر پر دھاوا بولنے والے اسرائیلی فوجیوں کو تھپڑمارے اور انہیں دھکے دے کر اپنے گھر سے نکال دیا تھا۔

اسرائیلی ریاست کی فوجی عدالت نے اسرائیلی فوجیوں کی جان کو خطرے میں ڈالنے کے الزام میں عہد تمیمی پر مقدمہ چلایا اور اسے آٹھ ماہ قید کی سزا سنا رکھی ہے۔ انسانی حقوق کی عالمی تنظیمیں عہد تمیمی کی گرفتاری اور بلا جواز حراست کو عالمی قوانین کی اور بچوں کے حقوق کی سنگین خلاف ورزی قرار دیتی ہیں۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل کی طرف سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ فلسطینی بچوں کو تحفظ فراہم کرنے، انہیں جیلوں میں قید کرنے کی پالیسی ترک کرنے اور زیرحراست کم عمر افراد کو عالمی قوانین کے تحت مناسب ماحول فراہم کرنا اسرائیلی ریاست کی ذمہ داری ہے۔ اسرائیلی حکومت کم عمر فلسطینی مزاحمت کارہ کو فوری طور پر رہا کرے کیونکہ اس کی گرفتاری عالمی قوانین کی پامالی ہے۔

اسرائیلی فوج نے عہد تمیمی کو 15 دسمبر کو امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے اعلان القدس کے چند روز کے بعد حراست میں لے لیا تھا۔ اس موقع پر اسرائیلی فوج نے تمیمی کے چچا زاد 14 سالہ محمد کے سرمیں گولیاں مار کر شہید کردیا تھا جس کے بعد عہد نے غصے میں آ کر اپنے گھر میں گھسنے والے صیہونی فوجیوں کو دھکے دے کر باہر نکال دیا تھا۔ اکیس مارچ کو اسرائیلی عدالت نے عہد تمیمی کو قصور وار قرار دیتے ہوئے اسے آٹھ ماہ قید کی سزا سنائی تھی۔

واضح رہے کہ اسرائیلی عقوبت خانوں میں قید فلسطینیوں میں عہد تمیمی واحد فلسطینی بچی نہیں بلکہ زندانوں میں کم سے کم 350 فلسطینی بچے پابند سلاسل ہیں۔ میں سے بعض کی عمریں سولہ سال سے بھی کم ہیں۔