You are here: غزہ احتجاجی ریلیوں پر اسرائیلی فوج کی وحشیانہ فائرنگ، مزید ایک فلسطینی شہید، ایک ہزار زخمی
 
 

احتجاجی ریلیوں پر اسرائیلی فوج کی وحشیانہ فائرنگ، مزید ایک فلسطینی شہید، ایک ہزار زخمی

E-mail Print PDF

0Pala10703غزہ (فلسطین نیوز۔مرکز اطلاعات) فلسطین کے علاقے غزہ کی پٹی میں حق واپسی کے لیے جدو جہد کرنے والے فلسطینیوں کی احتجاجی ریلیوں پر اسرائیلی فوج نے وحشیانہ فائرنگ اور آنسوگیس کی شیلنگ کی جس کے نتیجے میں ایک فلسطینی شہید اور سیکڑوں زخمی ہوگئے۔

فلسطین نیوز کو موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق اسرائیلی فوج کی فائرنگ سے مشرقی غزہ میں صحافیوں کو قصدا نشانہ بنا گیا جس کے نتیجے میں تین صحافی زخمی ہوگئے۔

جمعہ کے روز مشرقی غزہ کی سرحد پر ہزاروں فلسطینیوں نے ریلیاں نکالیں اور سرحد کی طرف بڑھنے کی کوشش کی۔ اس موقع پر تعینات اسرائیلی نشانہ بازوں نے پُرامن مظاہرین پر حملے کیے جس کے نتیجے میں ایک شہری شہید ہوگیا۔

فلسطینی وزارت صحت کے ترجمان کا کہناہے کہ اسرائیلی فائرنگ سے شہید فلسطینی نوجوان کی شناخت اسلام خرزاللہ کے نام سے کی گئی ہے جس کی عمر 28 سال بیان کی جاتی ہے۔

اسرائیلی فوج کی فائرنگ سے تین صحافیوں اور طبی عملے کے 17 رضاکاروں سمیت 1000 فلسطینی زخمی ہوئے ہیں۔

کل جمعہ 13 اپریل کو مشرقی غزہ کی سرحد پر جمع ہونے والے فلسطینی مظاہرین کی کوریج کرنے والی میڈیا ٹیموں پر اسرائیلی فوج نے آنسوگیس کی شیلنگ اور سیدھی گولیاں چلائیں جس کے نتیجے میں تین صحافی زخمی ہوگئے۔ زخمی ہونے والے ایک صحافی کی حالت خطرے میں بتائی جاتی ہے۔

جمعہ کو ہزاروں فلسطینیوں نے سرحد پرجمع ہو کرحق واپسی کے لیے ریلیاں نکالیں۔ مظاہرین نے اسرائیلی پرچم نذرآتش کیے اور فلسطینی قومی پرچم لہراتے ہوئے آگے بڑھتے رہے۔

رپورٹ کے مطابق صہیونی فوج کے نشانہ بازوں نے فلسطینی صحافیوں پر براہ راست فائرنگ کی۔ فائرنگ کی زد میں آ کر دسیوں فلسطینی مظاہرین بھی زخمی ہوگئے۔

صحافی احمد ابو حسین کے پیٹ میں گولی لگی جس کے نتیجے میں وہ شدید زخمی ہوگیا۔ اسے اسپتال منتقل کیا گیا ہے جہاں اس کی حالت خطرے میں بتائی جاتی ہے۔

اسرائیلی فوج کی آنسوگیس کی شیلنگ سے صحافی محمد الحجار اور عطیہ دریش بھی زخمی ہوئے ہیں۔ دونوں زخمیوں کو فوری طبی امداد کے بعد اسپتال منتقل کردیا گیا ہے تاہم ان کی حالت خطرے سے باہر بیان کی جاتی ہے۔

خیال رہے کہ فلسطین میں 30 مارچ کو شروع ہونے والی ’حق واپسی‘ تحریک چھ ہفتوں تک جاری رہے۔ گذشتہ دو ہفتوں کے دوران اسرائیلی فوج کی فائرنگ کے نتیجے میں غزہ میں 34 مظاہرین شہید اور چار ہزار کے قریب زخمی ہو  چکے ہیں۔