You are here: Home
 
 

صیہونی عقوبت خانوں میں حیوانوں سے بدتر سلوک کیا گیا: سویڈش رضاکار

E-mail Print PDF

0Pala11652اسٹاک ہوم (فلسطین نیوز۔مرکز اطلاعات) حال ہی میں فلسطین کے علاقے غزہ کی پٹی کی ناکہ بندی توڑنے کے لیے آنے والے سویڈن کے امدادی قافلے کے کارکنوں نے اسرائیلی جیل سے رہائی کے بعد انکشاف کیا ہے کہ اسرائیلی عقوبت خانوں میں ان کے ساتھ حیوانوں سے بد ترسلوک کیا گیا۔

فلسطین نیوز کو موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق محصورین غزہ کی مدد کرنے کی پاداش میں صیہونی زندانوں میں چند روز گذارنے والے سویڈش کارکن ’فیری ساربوشان‘ نے اسٹاک ہوم ہوائی اڈے پر دو دیگر امدادی کارکنوں لین انڈرسن اور می روٹ لفلر کے ہمراہ ایک پریس کانفرنس میں کہا کہ اسرائیلی بحریہ کے جلاد انہیں وحشیانہ انداز میں گھیسٹ کر عقوبت خانوں میں لے گئے جہاں ان کے ساتھ غیرانسانی سلوک کیا گیا۔

انہوں نے بتایا کہ ہمارے ایک برطانوی ساتھی رچرڈ سوڈن کو ایک تنگ و تاریک اور تنگ کمرے میں رکھا گیا جہاں اسے اذیتیں دی گئیں۔ ان کا کہنا ہے کہ گرفتار کیے گئے امدادی کارکنوں کو دو مربع میٹر کی تنگ اور انتہائی گندی جگہ پر رکھا گیا جہاں درجہ حرارت 35 سے 40 درجے سینٹی گریڈ کے درمیان تھا اور ہوا کا کوئی انتظام نہیں تھا۔ وہاں امدادی کارکنوں کے ساتھ حیوانوں سے بھی بدتر سلوک کیا گیا۔

رچرڈ نے بتایا کہ وہ بارہ گھنٹے تک ایک تنگ تاریک سیل میں رہے جہاں سے اسے باہر نکالا گیا تو ان کی حالت ایک میت جیسی تھی۔ ان کا کہنا تھا کہ صیہونی جیلر دانستہ طور پر امدادی کارکنوں پر نفسیاتی دباؤ ڈال رہے تھے۔ ان کےساتھ سویڈن کے چھ ، برطانیہ کے دو اور فرانس اور جرمنی کا ایک ایک کارکن تھا۔