You are here: فلسطین اسرائیل کا فلسطینی مزاحمت کار کا مکان تین دن میں مسمار کرنے کا حکم
 
 

اسرائیل کا فلسطینی مزاحمت کار کا مکان تین دن میں مسمار کرنے کا حکم

E-mail Print PDF

Eng389طولکرم (فلسطین نیوز۔مرکز اطلاعات) اسرائیلی حکام نے مفرور فلسطینی مزاحمت کار اشرف ابو شیخہ نعالوۃ کا غرب اردن کے شمالی شہر طولکرم میں موجود دو منزلہ مکان تین روز کے اندر اندر مسمار کرنے کا حکم دیا ہے۔

فلسطین نیوز کو موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق اسرائیلی فوج کی طرف سے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ مفرور فلسطینی مزاحمت کار کا مکان مسمار کرنے کے لیے اس کے اہل خانہ کو نوٹس جاری کردیا گیا ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ "برکان" صیہونی کالونی میں گذشتہ ہفتے دو صیہونی آباد کاروں کو فائرنگ کر کے موت کے گھاٹ اتارنے والے فلسطینی کا الشویکہ میں موجود مکان مسمار کرنے کا حکم دیا گیا ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ نعالوۃ کے اہل خانہ کو جاری کردہ نوٹس میں کہا گیا ہے کہ وہ تین دن کے اندر اندر مکان مسمار کردیں ورنہ مکان کی مسماری پر اٹھنے والے اخراجات بھی ان سے وصول کیے جائیں گے۔

خیال رہے کہ اسرائیلی فوج ایک فلسطینی نوجوان اشرف نعالوۃ کی تلاش میں جس پر الزام ہے کہ اس نے گذشتہ ہفتے برکان صیہونی کالونی میں گھس کر دو صیہونی آباد کاروں کو ہلاک اور ایک کو زخمی کردیا تھا۔ اس کے بعد سے وہ خود روپوش ہے اور اسرائیلی فوج اس کی تلاش میں سرگرم ہے۔ تا حال اس کی گرفتاری عمل میں ‌نہیں لائی جاسکی۔

یہ امر قابل ذکر رہے کہ فلسطینی مزاحمت کاروں کے اہل خانہ کو اجتماعی سزا کے طور پر ان کے گھروں کی مسماری اب معمول بن چکا ہے۔